لیاری میں معیاری تعلیم کے موضوع پر منقعدہ سیمینار

گذشتہ دنوں ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر ( پرائمری/ سیکنڈری / ہائیر سیکنڈری میل) ضلع جنوبی کی جانب سے لیاری کے تعلیمی مسائل کے حوالے سے ایک تعلیمی سیمینار کا انعقاد کیا گیا ∙ اس سیمینار کے انعقاد میں ڈی ایم سی ساؤتھ نے خصوصی طور پر حکومت سندھ کے محکمہ تعلیم کے اس مثبت اقدام پر انکے ساتھ بھرپور تعاون کیا ∙
اس سیمینار کے مہمان خصوصی لیاری سے ممبر قومی اسمبلی جناب شاہجاں بلوچ صاحب تھے جبکہ انکے ہمراہ لیاری کے دونوں صوبائی ممبران اسمبلی محترمہ ثانیہ ناز صاحبہ اور جناب جاوید ناگوری بھی موجود تھے جبکہ پیپلز پارٹی جنوبی کے صدر جناب خلیل ہوت صاحب نے خصوصی طور پر اس تقریب میں شرکت کی ، ڈی ایم سی ساؤتھ کی نمائندگی ڈسٹرکٹ ساؤتھ کے چیئرمین جناب ملک فیاض صاحب اور انکے ڈسٹرکٹ کوآرڈینیٹر جناب حبیب حسن صاحب نے کی ، میزبانوں میں محترمہ صبامحمود ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر ساؤتھ ( پرائمری/ سیکنڈری / ہائیر سیکنڈری میل) ، محترمہ غزالہ پروین سومرو صاحبہ ڈپٹی ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر ساؤتھ ( پرائمری/ سیکنڈری / ہائیر سیکنڈری میل) و تعلقہ ایجوکیشن آفیسر لیاری (فی میل) ، جناب آصف اعجاز ٹانوری صاحب تعلقہ ایجوکیشن آفیسر (سیکنڈری میل/فی میل) لیاری اور جناب عبداللطیف برفت صاحب تعلقہ ایجوکیشن آفیسر ( پرائمری میل) لیاری نے شرکت کی ∙
یہ سیمینار اس لحاظ سے بہت اہمیت کا حامل رہا کہ یہ پہلی بار ہوا ہے کہ منتخب عوامی نمائندوں ، کمیونٹی کے معززین اور سرکاری افسران کے مابین عوامی سطح پر لیاری کے تعلیمی مسائل کو سنجیدگی سے مل کر حل کرنے کے لئے براہ راست رابطہ ہوا ہے ، اس تقریب میں کم وبیش لیاری کے تمام سرکاری اسکولز کے صدرمدرسین موجود تھے جنہوں نے اپنے افسران اور عوامی نمائندوں کو اپنے اپنے اسکولز کے اہم مسائل بیان کیے∙
پروگرام کے آغاز میں گورنمنٹ بوائز سیکنڈری اسکول لیاری نمبر 2 کے صدر مدرس اصغر بلوچ نے میزبان اسکول کی حیثیت سے آنے والے تمام مہمانوں کی آمد کا شکریہ ادا کیا اور اپنے خطاب میں اس بات کا خاص طور پر ذکر کیا کہ یہی لیاری کا وہ علاقہ ہے جسے کچھ عرصے قبل نوگو ایریا کہا جاتا تھا لیکن اب الحمدللہ صورتحال یکسر تبدیل ہے اور یہاں نہ اس سیمینار کا انعقاد ہوا ہے بلکہ اس سے پیشتر کچھ عرصے قبل وزیر تعلیم ، سیکریٹری تعلیم اور کراچی میٹرک بورڈ کے چیئرمین بھی دورہ کرچکے ہیں ∙
محترم آصف اعجاز ٹانوری صاحب نے اپنے خطاب میں محکمے کے مختلف مسائل کی نشاندہی کی کہ جن کی وجہ سے معیار تعلیم میں گراوٹ آئی ، انہوں نے تجویز پیش کی کہ ماہانہ بنیادوں پر عوامی نمائندوں اور ڈی ایم سی کے نمائندوں کے ساتھ مسلسل میٹنگ کا سلسلہ رکھا جائے تاکہ اسکولز کے مسائل کی بروقت نشاندہی کے ساتھ ساتھ انہیں حل کرنے میں بھی فوری پیشرفت کی جاسکے ، جناب عبداللطیف برفت نے اپنے خطاب میں معیار تعلیم کو بلند کرنے کے لئے اساتذہ کی تربیتی ورکشاپ کی اہمیت پر زور دیا اور اس سلسلے میں رضاکارانہ طور پر اپنی خدمات بھی پیش کیں ∙ ڈی ایم سی ساؤتھ کے کوآرڈینیٹر اور یوسی 12 کے چیئرمین جناب حبیب حسن صاحب نے بڑے بڑے بھرپور انداز میں لیاری کے اسکولز کو درپیش مختلف مسائل کو تفصیلا بیان کیا ، انکے مطابق اساتذہ خصوصا سائنس کے مضامین کے اساتذہ کی قلت معیار تعلیم پر بری طرح اثر انداز ہورہی ہے ، اس سلسلے میں انہوں نے اپنے ڈی ایم سی کے اسکولز کی مثال پیش کی کہ جن میں جناب فیصل ایدھی اور دیگر مخیر حضرات کے تعاون سے نہایت اعلٰی معیار کے سائنس لیبارٹریز قائم ہوچکی ہیں لیکن اساتذہ کے نہ ہونے کی وجہ سے اکثرابھی تک غیر فعال ہیں ، مختلف اسکولز میں سرکاری فنڈز کی کمی کا بھی انہوں نے ذکر کیا کہ جسکی وجہ سے چھوٹے چھوٹے مسائل گھمبیر صورت اختیار کرجاتے ہیں ، اکثر اسکولز میں صفائی اور بجلی کی ناقص صورتحال کو بھی انہوں نے تفصیلا بیان کیا، خلیل ہوت ضلعی صدر پیپلز پارٹی نے مختصر خطاب میں سیمینار کے انعقاد کو سراہا اور اس سلسلے میں اپنے بھرپور تعاون کا یقین دلایا ∙ خصوصی طور پر مدعو کئے گئے مہمان جناب پریل چانڈیو صاحب جو سیکریٹری تعلیم کے بائیو میٹرک اور مانیٹرنگ ٹیم کے سربراہ ہیں انہوں نے اپنی ٹیم کی کارکردگی کا ذکر کیا اور اساتذہ کو یقین دہانی کرائی کہ بائیومیٹرک اور مانیٹرنگ کا یہ نظام انکے تحفظ کے لئے ہے اور اس کی بناء پر ہی اساتذہ کی اسکولز میں حاضری سوفیصد ہوگی جو یقینا معیار ِ تعلیم کے بلند کرنے میں معاون ومددگار ثابت ہوگا∙
مہمانانِ خاص میں محترمہ ثانیہ ناز صاحبہ نے سیمینار کی اہمیت بیان کرتے ہوئے اسے وقت کی ضرورت قرار دیا ، انہوں نے ماضی کی یادیں تازہ کرتے ہوئے اپنے زمانہ طالبعلمی کے اسکولز کا موجودہ اسکولز کا موازنہ کیا اور فخریہ بتایا کہ موجودہ ڈپٹی ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر محترمہ غزالہ سومرو صاحبہ میر ایوب گرلز اسکول میں انکی ہیڈ مسٹریس تھیں اور انکے دور میں اسکول کے مختلف مسائل کو طلبہ کمیونٹی اور اساتذہ خود ہی مل کر حل کرتے تھے اور آج بھی اسی جذبے کی ضرورت ہے ∙ جناب جاوید ناگوری صاحب نے اپنے مختصر خطاب میں اساتذہ کو اپنی فرائض پوری دیانت داری سے ادا کرنے کی تلقین کی گئی اور اپنے ہرممکن تعاون کا یقین دلایا ∙ ملک محمد فیاض صاحب نے سرکاری اسکولز کے حوالے سے اپنے ڈی ایم سی ساؤتھ کے اسکولز کی مثال دی کہ جو کچھ عرصہ قبل تک طلبہ سے خالی اور مختلف مسائل کا شکار تھے لیکن انہوں نے اپنے ڈسٹرکٹ کوآرڈینیٹر حبیب حسن صاحب کی مدد سے ان اسکولز کے نہ صرف بنیادی مسائل حل کئے بلکہ ان میں طلبہ وطالبات کے داخلوں میں بھی قابل ِرشک ترقی کی ∙ محترمہ صبامحمود ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر نے اپنے خطاب میں مختلف مقررین خصوصا حبیب حسن صاحب کے پیش کردہ نکات پر اپنا موقف پیش کیا اور بطور ضلعی ایجوکیشن آفیسر اپنے مسائل کو بھی پیش کیا ، اس موقع پر انہوں نے اساتذہ کو تین ماہ کی مہلت دیتے ہوئے خبردار کیا کہ وہ اپنے فرائض کی ادائیگی میں کسی قسم کی کوتاہی نہ برتیں بصورت دیگر وہ مجبورا انہیں نوکری سے معطل کردے گی جو انکا قانونی اختیار ہے ∙ مہمان خصوصی ممبر قومی اسمبلی شاہجاں بلوچ نے نے اپنے صدارتی خطاب میں پورے سیمینار کی باتوں کا اختصار سے جائزہ لیا اور مختلف مسائل کے حوالے سے اپنے تعاون کا یقین دلایا اس موقع پر انہوں نے تمام حاضرین مجلس سے باقاعدہ ہاتھ اٹھواکر یہ عہد لیا کہ اب ہم لیاری کے تعلیمی معیار کی بلندی کے لئے متحد رہیں گے اور کسی قسم کے ناجائز دباؤ میں آکر تعلیم پر کو ئی سودے بازی نہیں کریں گے∙ تقریب کے آخر میں محترمہ غزالہ پروین سومرو صاحبہ نے تمام معزز مہمانوں کی آمد کا شکریہ ادا کیا اور اپنے اساتذہ اور دیگر مہمانوں کو خراج تحسین پیش کیا کہ جو اتنی دیر تک اس تقریب میں موجود رہے ∙
شدید گرم موسم میں اس سیمینار میں ان تمام معزز مہمانوں اور اساتذہ کا اتنی دیر تک بیٹھے رہنا اس بات کی عکاسی کرتا ہے کہ واقعی اہلیان لیاری اپنی نئی نسلوں کی آبیاری کے لئے تعلیم کی اہمیت سے آشنا ہیں اور وہ اس کے لئے ہر قسم کی قربانی کے لئے تیار ہیں ∙
رپورٹ مرتبہ ۔ شبیر حسین بلوچ